Shair

شعر

آج کی رین درد و غم میانے
کوئی مجھ سار کا خراب نہ تھا

(ولی)

دل میں پرائے درد کی اِک ٹیس بھی نہیں
تخلیق کی لگن ہے‘ تو زخموں کو پالئے

(شکیب ‌جلالی)

جو بھی علاج درد کرو، میں حاضرہوں، منظور مجھے
لیکن اک شب امجد جی، وہ چہرۂ تاباں، دیکھو تو!

(امجد اسلام امجد)

کہانی ایک سنائی جو ہیر رانجھے کی
تو اہل درد کو پنجابیوں نے لوٹ لیا

(انشا)

یہ اہلِ درد کی بستی ہے،زرگروں کی نہیں
یہاں دلوں کا بہت احترام کرتے ہیں

(امجداسلام امجد)

ایک درد دل سے بولی بھر کے آہ
رات دیکھا میں نے بھی روز سیاہ

(معروف)

First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 65

Poetry

Pinterest Share