Shair

شعر

میں اپنی محّبت میں گرفتار ہُوا ہُوں
اِس درد کی قسمت میں دَوا کوئی نہیں ہے

(امجد اسلام امجد)

چنپا ادا سے ہو کے خم چپ ہو رہا ہے یہ ستم
کھولا نہ خوں میں دل کا غم بدلا نہ با درد و الم

(سلیم)

جس کو بھی چاہا اسے شدّت سے چاہا ہے فراز
سلسلہ ٹوٹا نہیں ہے درد کی زنجیر کا

(احمد ‌فراز)

ہم جتنے ہیں سب ساتھ تمہارے ہی چلیں گے
یہ درد تو اب ہم سے نجائے گا سہارا

(نظیر)

ہر درد کا دوا ہے طبیباں کنے ولے
اس درد کا نہیں ہے دوا ہائے ہائے ہائے

(غواصی)

داد چاہے تو دل اپنی یہ غزل واہ پڑھنا
کہ جہاِں درد ہو‘ سودا بھی ہو اور میر بھی ہو

(دل عظیم آبادی)

First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 65

Poetry

Pinterest Share