• بیٹا ہو سرخرو تو ہو ماں کینہ جو سفید
    دنیا کا ہوگیا ہے یہ کیسا لہو سفید
    شاد لکھنوی
  • زینب نے پکارا میرے ماں جائے برادر
    ناشاد بہن لینے رکاب آئے برادر
    انیس
  • اناتمنا سوں کیا کوں ماں مجھے کہتے شرم آئی
    چھے مہینے کے بھتر پیروکوں پاڑی آس کاٹی نے
    ہاشمی
  • تدبیر اک نکالی ہے آنسو نہ اب بہاؤ
    ہم پانی لینے جاتے ہیں تم ماں کے پاس جاؤ
    انیس
  • منکر پاک ہے وہ شیشے کی خوں ریزی سے
    مرد ماں دیکھو تو پھر آنکھیں ہیں کیوں لال اس کی
    جوشش
  • شہر میں آکر پڑھنے والے بھول گئے
    کس کی ماں نے کتنا زیور بیچا تھا
    اسلم ‌کولسری
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 14

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter