Shair

شعر

ماں سے سوا شفیق ہیں اور حق شناس ہیں
بچے تمہارے فاطمہ زبرا کے پاس ہیں

(مراثی)

سوشہ ماں کے نزدیک جا بیس کر
نپٹ عجز سوں پانو پر سیس دھر

(قطب مشتری)

اصغر کو جُدا دکھ ہو قلق ماں کو جُدا ہو
گرمی کے سبب دودھ جو گھٹ جائے تو کیا ہو

(انیس)

تھی صبح شب عقد کہ پیک اجل آیا
دیکھا بھی نہ تھا ماں نے کہ سہرے کو بڑھایا

(انیس)

جنم تم ایک مہا ویر کو دیوی دوگی
مرد جانباز کی ماں بن کے دعائیں لوگی

(کمار سمبھو)

خبر یہ ہوئی جب کہ ماں باپ کو
کیا گم انہوں نے وہیں آپ کو

(۔۔۔)

First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 14

Poetry

Pinterest Share