• خدا کے واسطے مت قتل کر ظالم سنبھال آنکھیں
    کرے ہیں چھاؤنی سی ہر طرف تیری چھنال آنکھیں
    مرزا علی
  • یہ اوروں سے آنکھیں لڑانے ہیں آپ
    ہمیں دیکھ کر منہ چھپا تے ہیں آپ
    معروف
  • روح کی آنکھیں چکا چوند ہوئی جاتی ہیں
    کس کی آہٹ کا مرے کان میں نغمہ چمکا
    امجد اسلام امجد
  • نہ اونچی ہونگی آنکھیں شرم و خفت سے کہیں اپنی
    یہ گردن بار الفت سے جھکی ہے ان کے احساں پر
    واجد علی شاہ
  • چار سو دیکھوں ہوں جوں آئنہ آنکھیں پھاڑ پھاڑ
    میری نظروں سے جو اوجھل وہ پری وش ہے مرا
    جرأت
  • نیل پیل کرتے ہیں آنکھیں جو مجھکو دیکھ کر
    ایک رنگ آتا ہے اک جاتا ہے مجھ رنجور کا
    داغ
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 61

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter