Shair

شعر

دہشت یہ تھی کہ شہر صفوں پر نہ آپرے
گھوڑے بھڑک کے دوسرے گھوڑوں پہ جاپڑے

(انیس)

خورشید فلک فخر سے آملتاہے
دن کو ذروں میں شب کو پروانوں میں

(انیس)

کرتے تھے آب پاش مکرر زمیں کوتر
فرزند فاطمہ پہ نہ تھا سایہ شجر

(انیس)

حق بھی دا ہوئے نہ شہ کوش خصال کے
کوب آبرو حضور نے دی ہم کو پل کے

(انیس)

آئے ہیں ہنستے روتے ہوئے گھر سے جاتے ہیں
شفقت بھی آپھی کرتے ہیں آبھی دلاتے ہیں

(انیس)

پایا ہے رہ راست کو تلوار کے خم سے
سیکھے کوئی آتش نفسی تیغ دودم سے

(انیس)

First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 207

Poetry

Pinterest Share