• ابروے قاتل بجھا ہے زہر میں
    پوچھتے کیا ہو بجھاو اس تیغ کا
    ناصر
  • مرا آنسو ہے وہ زہر آب‘ نیلا ہو بدن‘ سارا
    خدا نا کردہ لگ جائے گر اے غم خوار دامن سے
    ذوق
  • نیش زن گونج ہے بالے کی تری جوں عقرب
    ہو کے زہر آب جو پلکوں سے میرا دل ٹپکا
    شاہ نصیر دہلوی
  • جو جلاب چک و سٹیا قہر تے
    زمیں سب ہری ہورہی زہر تے
    قطب مشتری
  • وہ سب کچھ سنی ان سنی کر گئے
    رہے ہم یہاں زہر اگلتے ہوئے
    ظہیر دہلوی
  • خرد کا زہر عدم موت ہے جوانی کی
    وہ خوش نصیب ہے جو مرد ہوشمند نہیں
    عبدالحمید ‌عدم
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 15

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter