• کہو ہو دیکھ کر کیا زہر لب ہم ناتوانوں کو
    ہماری جان میں طاقت نہیں باتیں اٹھانے کی
    میر
  • بر روے رقبیان بد اندیش و چغل خور
    تھتکار زہر جانب و پھٹکار جو ہے سو
    جعفر زٹلی
  • اے ولی اس کا زہر کیوں اترے
    جن نے کھایا ہے عاشقی کا نیش
    ولی
  • کس کس سے رہیں دور‘ تو کس قرب کو ڈھونڈیں
    دیتے ہیں محبت میں یہاں زہر بدل کر
    علامہ ‌رشید ‌ترابی
  • رگ و پے میں جب اترے زہر غم تب دیکھیے کیا ہو
    ابھی تو تلخی کام و دہن کی آزمائش ہے
    غالب
  • ابروے قاتل بجھا ہے زہر میں
    پوچھتے کیا ہو بجھاو اس تیغ کا
    ناصر
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 15

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter