• غزل سن کر مری کیونکر نہ صاحب دل کو حال آئے
    ہر اک مضمون درد آمیز ہے ہر بیت حالی ہے
    سحر(نواب علی خاں)
  • درد کا کہنا چیخ اٹھو‘ دل کا تقاضہ وضع نبھاؤ
    سب کچھ سہنا‘ چُپ چُپ رہنا کام ہے عزت داروں کا
    ابن ‌انشاء
  • درد نے کروٹ ہی بدلی تھی کہ دل کی آڑ سے
    دفعتاً پردہ اُٹھا اورپردہ دار آ ہی گیا
    جگر
  • جس دل کو ڈھونڈھتا تھا وہ ہم نے بتا دیا
    اے درد عشق تجھ کو ٹھکانے لگا دیا
    جلال
  • شرف حرف مائل در کچھ نہ بسائے
    گرد چھوئیں دربار کی سو درد دور ہوجائے
    شیخ شرف الدین منیری
  • تیرے غم کے سِوا زمانے میں
    کون سے درد کا علاج نہیں!
    امجداسلام امجد
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 65

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter