• تم تو صرف اک دید کی حسرت پہ برہم ہوگئے
    کم سے کم پوری تو سنتے داستانِ آرزو
    استاد ‌قمر ‌جلالوی
  • خوشا وہ دل کہ ہو جس دل میں آرزو تیری
    خوشا دماغ جسے تازہ رکھے بو تیری
    آتش
  • کیا آرزوئیں خاک میں اپنی ملی نہ یاں
    کس روسے فلک سے میں کچھ آرزو کروں
    قائم
  • تجھے تو میں نے بڑی آرزو سے چاہا تھا
    یہ کیا کہ چھوڑ چلا تو بھی اور سب کی طرح
    احمد فراز
  • ہم خون آرزو کا جو محضر بنائیں گے
    تجھ کو گواہ اے دل مضطر بنائیں گے
    تعشق
  • سراپا آرزو ہونے نے بندہ کردیا ہم کو
    وگرنہ ہم خدا تھے گردل بے مدعا ہوتے
    میر
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 21

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter