URDU encyclopedia

اردو انسائیکلوپیڈیا

search by category

قسم کے ذریعہ تلاش کریں

search by Word

لفظ کے ذریعہ تلاش کریں

یاسمین حمید

Description

تفصیل

پاکستانی اردو شاعرہ ، گذشتہ ۲۵ برسوں درس و تدریس سے وابستہ ہیں اور شاعری بھی کررہی ہیں ۔’’لاہور یونیورسٹی اوف مینجمنٹ سائنسز‘‘ سے وابستہ ہیں ۔ ۱۹۵۰ء لاہور میں پیدا ہوئیں ، بقیدِ حیات ۔ نو عمری سے شاعری کا آغاز کیا ۔ پانچ شعری مجموعوں کی خالق ہیں ۔پہلا شعری مجموعہ ۱۹۸۸ء میں ’’پسِ آئینہ ‘‘ کے عنوان سے شایع ہوا ۔ اعلیٰ تعلیم یافتہ شاعرہ ہیں ۔ ایم ایس ۔سی ’’تغزیات‘‘ میں جامعہ پنجاب سے ۱۹۷۲ء میں کیا ۔ نسلِ نو کی آواز تسلیم کی جاتی ہیں ۔پاکستانی شاعری کا انگریزی زبان میں ترجمہ بھی کیا ۔حال ہی میں اوکسفرڈ یونیورسٹی پریس نے آپ کے فن و شخصیت پر ایک تحقیقی مقالہ شایع کیا ہے جس میں آپ کی تاریخِ پیدائش 13 اگست 1949ء تحریر ہے۔تاہم ، ہم نے پنجاب یونیورسٹی کے ریکارڈ سے بھی مدد لی ہے ۔۲۰۱۲ء میں یونائٹڈ بینک نے آپ کی انگریزی کتاب’’پاکستان ان اردو ورس‘‘ کو ایک لاکھ رُپے کا ادبی انعام دیا ۔ مجموعہ ہاے کلام : پسِ آئینہ ( ۱۹۸۸ء ) ۔ حصارِ بے درو دیوار (۱۹۹۱ء ) ۔ آدھا دن اور آدھی رات ( ۱۹۹۶ء) ۔ فنا بھی ایک سراب (۲۰۰۱ء) ۔ دوسری زندگی (۲۰۰۷ء ) *حکومتِ پاکستان نے ۱۴؍ اگست ۲۰۰۸ ء کو ’’ تمغہ امتیاز ‘‘ سے نوازا ۔ *فاطمہ جناح میڈل برائے ادب ۸ ؍ مارچ ۲۰۰۶ ء میں حاصل کیا ۔ *احمد ندیم قاسمی ایوارڈ ۲۰۰۱ ء میں حاصل کیا ۔ وغیرہ ! نمونہ کلام : رقص کرتی لہر پر بس مسکرانا چاہیے پھینک کر پانی میں پتھر بھول جانا چاہیے سر پر چھت تو پڑ گئی ہے یہ مگر سوچا نھیں دل کی بے سمتی کو بھی کوئی ٹھکانا چاہیے تلخیِ احساس کو اپنا حدف ملتا نھیں جو سمو لے تیر کو ، ایسا نشانہ چاہیے کیا خبر یہ شہر میری فتح کے قابل نہ ہو سوچ کر ہی کشتیوں کو بھی جلانا چاہیے

Poetry

Pinterest Share