Shair

شعر

نہ تھی نیند شہ رات کوں دھاک تے
چُھٹی آج اس بھِشٹ ناپاک تے

(قطب مشتری)

رات گئے جب چاند ستارے لُکن میٹی کھیلیں گے
آدھی نیند کا سپنا بن کر میں بھی تم کو چُھولوں گا

(امجد اسلام امجد)

نہ مجکو بھوک دن نا نیند راتا
ہرہ کے درد سیں سینہ پراتا

(افضل جھنجانوی)

خواب میں روئے ملیح یار آیا ہے نظر
لطف میٹھی نیند کا پایا سلونا رات کو

(راسخ)

خُوشبو کی طرح مُجھ پہ جو بِکھری تمام شب
میں اُس کی مَست آنکھ سے چُنتا رہا‘ وہ نیند

(امجد اسلام امجد)

حیرت ہے سننے والو‘ تمہیں نیند آگئی
کیوں سورہے ہو‘ ختم ہوئی داستاں کہاں

(قیصر ‌مشہدی)

First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 16

Poetry

Pinterest Share