Shair

شعر

دیکھنے آئے تھے وہ اپنی محبت کا اثر
کہنے کو یہ ہے کہ آئے ہیں عیادت کے لئے

(حسرت)

گھل گھل کے مرچلا ہوں محبت کے روگ میں
ڈالا ہے تیرے غم نے مجھے اس بروگ میں

(فیض)

عطا ہوا تھا ہمیں ایک دن محبت کا
وہ اک دن بھی نہ جانے کہاں کہاں گزرا

(اقبال ‌صفی ‌پوری)

گاہے کراہتا ہے گہے چپ ہے گاہ مست
ممکن نہیں مریض محبت بھلا رہے

(میر)

محبت کے اورنگ میانے کیتے پھراتے ہے
خدایا کوں بنے آخر نبی ایسے رنگلے سوں

(مشتاق)

اسے کسی کی محبت کا اعتبار نہیں
اسے زمانے نے شاید بہت ستایا ہے

(بشیر بدر)

First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 71

Poetry

Pinterest Share