Shair

شعر

خدایا داد لے ہور داد لے اس ظالماں کن تھے
کہ جدنیں سو یتیماں پر جفا ہور ظلم دھایا ہے

(قلی قطب شاہ)

ظلم ہے‘ قہر ہے‘ قیامت ہے
غصّے میں اُس کے زیر لب کی بات

(میر تقی میر)

صفت ظلم میں یکسان ہے ستمگر کم وبہیں
آب رکھتی ہے بسان دم شمشیر چھری

(رشک)

کیا ظلم تھا جو آپ کے اوپر روار ہا
تعریف سے ہے ذکر ہر اک لب پہ آپ کا

(قہر عشق)

تکلّف بر طرف نظارگی میں بھی سہی لیکن
وہ دیکھا جائے، کب یہ ظلم دیکھا جائے ہے مجھ سے

(غالب)

ظلم و ستم کی ناؤ ڈبونے کے واسطے
قطرہ کو آنکھوں آنکھوں میں طوفاں بنادیا

(ظفر علی خاں)

First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 16

Poetry

Pinterest Share