Shair

شعر

ترے حسن کی ایک ذرہ جھمک میں
زلیخا نے اس ماہ کنعاں کو دیکھا

(محب)

دم نظارہ لڑے مرتے ہیں عاشق اوس پر
دولت حسن کی پیش آنے سے دنیا ہے وہ رخ

(آتش)

خط بناتے وقت ٹوٹا حسن یار
اپنے دل میں خوش بہت حجام ہے

(اودھ پنچ)

حاجب درگاہ رہتے ہیں سلاطیں سربکف
واجب التعظیم ہے اے بے ادب سرکار حسن

(نقوش مانی)

وہ اس کا حسن سادہ وجہ گداز خاطر
شفاف جسم نازک پالودہ سیم کا سا

(دیوان زکی)

حسن تصور کا مزا پوچھے مرے دل سے کوئی
جب دونوں آنکھیں بند کیں تو کھل گئے چودہ طبق

(اعجاز نوح)

First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 81

Poetry

Pinterest Share