Word of the dayآج کا لفظ

Martello

کنج انزدا

MEANS: ملک کی حفاظت کے لئے ساحلی قلعہ بندی

معنی: گوشہِ تنہائی

Listen to Urdu Pronunciationالفاظ کے تلفظ سنئیے

Couplet of the day

آج کا شعر

Click on the below image to open up the complete image gallery. مکمل گیلری کو دیکھنے کے لئے نیچے دی گئی تصویر پر کلک کریں۔

Urdu Encyclopedia

اردو انسائیکلوپیڈیا

احمد فراز

Description

تفصیل

معروف ترین پاکستانی شاعر ، سید احمد شاہ علی اصل نام ۔12 ؍ جنوری 1931ء کو کوہاٹ میں پیدا ہوئے اور 25 اگست 2008ء کو اسلام آباد میں انتقال کیا۔آپ بیسویں صدی میں اردو کے مقبول ترین شاعر قرار پائے لیکن آپ کا زمانہ علامہ اقبال کے بعد کا اور فیض احمد فیض کے دور کا ہے۔آپ نے اُردو اور فارسی ادبیات میں ایم ۔اے کی اسناد حاصل کرنے کے بعد کالج میں پروفیسر مقرر ہوئے۔دورانِ تعلیم ریڈیو پاکستان کے لیے فیچر لکھنا بھی شروع کیے اور جب آپ کا پہلا مجموعہ کلام ’’ تنہا تنہا ‘‘ شایع ہوا تو آپ بی۔اے کے طالب علم تھے۔ایم ۔اے کرنے کے بعد ریڈیو سے علاحدہ ہوگئے اور یونیورسٹی میں پڑھانا شروع کردیا ۔ملازمت کے دوران دوسرا شعری مجموعہ ’’دردِ آشوب‘‘ شایع ہوا جس کو ’’پاکستان رائٹرز گلڈ‘‘ کی جاب سے ’’آدم جی ادبی اعزاز‘‘ سے نوازا گیا۔احمد فراز کو 1976ء میں ’’اکادمی ادبیات ، پاکستان‘‘ کا پہلا سربراہ مقرر کیا گیا بعد ازاں جنرل ضیاء الحق کے دور میں اُنھیں جلاوطنی کا زہر بھی پینا پڑا۔آپ 2006ء تک ’’ نیشنل بک فاؤنڈیشن‘‘ کے سربراہ بھی رہے لیکن ایک ٹی وی انٹرویو کے سبب آپ کو اس ملازمت سے فارغ کردیا گیا۔1988ء میں آپ کو ’’آدم جی ادبی ایوارڈ‘‘ ، اسی سال بھارت میں ’’ فراق گورکھپوری ایوارڈ‘‘ سے نوازا گیا۔1990ء میں ’’اباسین ایوارڈ‘‘ سے نوازا گیا۔1991ء میں ’’اکیڈمی آف اردو لٹریچر، کینیڈا‘‘ نے اعلٰی اعزاز دیا جبکہ 1992ء میں بھارت میں ’’ ٹاٹا ایوارڈ‘‘ دیا گیا۔جامعہ ملیہ بھارت میں آپ پر پی ایچ ڈی کا مقالہ لکھا گیا جس کا عنوان ’’ احمد فرازکی غزل‘‘ ہے اس کے علاوہ بہاول پور یونیورسٹی مٰں بھی آپ کے فن اور شخصیت پر مقالہ تحریر کیا گیا۔آپ کی شاعری کے سات زبانوں میں ترجمے بھی ہوچکے ہیں جن میں اُردو کے علاوہ پنجابی ، ہندی ، انگریزی ، فرانسیسی،روسی ، جرمن اور یوگو سلاوی زبانیں بھی شامل ہیں۔2004ء میں جنرل پرویز مشرف کے دورِ حکومت میں آپ کو ’’ہلالِ امتیاز‘‘ عطا کیا گیا لیکن دو سال بعد سرکاری پالیسیوں پر احتجاج کرتے ہوئے احمد فراز نے یہ اعزاز واپس کردیا۔آپ کی ایک معروف نظم ’’آزادی‘‘ پر آپ کو نظر بند کردیا گیااور آپ کے گھر کا ساز و سامان اُٹھا کر باہر پھینک دیا گیا۔اس موقع پر احمد فراز نے ایک تاریخی جُملہ کہا کہ مجھے خوشی اس بات کی ہے کہ اعلٰی سرکاری عہدے دار میرا سامان اُٹھا اُٹھا کر باندھ رہے ہیں۔ آپ کی شاعری زندہ دل کی دھڑکن ہے اور زندگی ی تاثیربن چکی ہے۔ مجموعہ ہائے کلام : تنہا تنہا ۔ دردِ آشوب ۔ شب خون ۔ نایافت ۔ میرے خواب ریزہ ریزہ ۔ بے آواز گلی کوچوں میں۔نابینا شہر میں آئینہ ۔ پس انداز موسم ۔ سب آوازیں میری ہیں۔خواب گل پریشاں ہے۔مودلک ۔ غزل بہانہ کرو ۔جاناں جاناں ۔ اے عشق جنوں پیشہ مشہور غزلیں : اب کے ہم بچھڑے تو شاید کبھی خوابوں میں ملیں جس طرح سوکھے ہوئے پھول گلابوں میں ملیں ڈھونڈ اُجڑے ہوئے لوگوں میں وفا کے موتی یہ خزانے تجھے ممکن ہے خرابوں میں ملے تُو خدا ہے نہ میرا عشق فرشتوں جیسا دونوں انساں ہیں تو کیوں اتنے حجابوں میں ملیں اب نہ وہ میں ہوں نہ تُو ہے نہ وہ ماضی ہے فراز ؔ جیسے دو شخص تمنا کے سرابوں میں ملیں ایک اور غزل : برسوں کے بعد دیکھا ،اِک شخص دل رُبا سا اب ذہن میں نھیں ہے ، پر نام تھا بھلا سا الفاظ تھے کہ جگنو ، آواز کے سفر میں جیسے کہ جنگلوں میں بن جائے راستہ سا معروف شعر : ؂ تم تکلف کو بھی اخلاص سمجھتے ہو فرازؔ دوست ہوتا نھیں ہر ہاتھ ملانے والا ؂ میرے صبر کی انتہا کیا پوچھتے ہو فرازؔ وہ مجھ سے لپٹ کر رورہا تھا کسی اور کے لیے

Shair Collection

اشعار کا مجموعہ

Compilation of top 20 hand-picked Urdu shayari on the most sought-after subjects and poets

انتہائی مطلوب مضامین اور شاعروں پر مشتمل 20 ہاتھ سے منتخب اردو شاعری کی تالیف

SEE FULL COLLECTIONمکمل کلیکشن دیکھیں
Pinterest Share