Word of the dayآج کا لفظ

Martello

کنج انزدا

MEANS: ملک کی حفاظت کے لئے ساحلی قلعہ بندی

معنی: گوشہِ تنہائی

Listen to Urdu Pronunciationالفاظ کے تلفظ سنئیے

Couplet of the day

آج کا شعر

Click on the below image to open up the complete image gallery. مکمل گیلری کو دیکھنے کے لئے نیچے دی گئی تصویر پر کلک کریں۔

Urdu Encyclopedia

اردو انسائیکلوپیڈیا

Pigeon کَبُوتَر

English NamePigeon
Group of AnimalBird
Plural کبوتروں
Male جی ہاں
Female کبوتری
Baby Animal's Nameچُوزہ
Soundغُٹرغُوں
No Urdu Nameمرغ سندیسہ ، مرغ نامہ بر
Imagehttp://www.flickr.com/photos/tintagel22/3292785899/

Description

تفصیل

کبوتر Columbidae خاندان سے تعلق رکھنے والا ایک پرندہ ہے جو Columbiformes گروہ سے تعلق رکھتا ہے اس گروہ میں 300 سے زائد اقسام کے عصفوری نسل کے پرندے شامل ہیں۔ کبوتر فاختہ سے بڑا ایک پرندہ ہے۔ اس کی چونچ چھوٹی ‘ سیدھی اور نوك دار ہوتی ہے۔ دنیا میں پائے جانے والے تمام پرندوں میں کبوتر کے پیر انتہائی سبک اور خوبصورت ہوتے ہیں۔ یہ اپنے رہنے کے لئے تنکوں اور گھاس پھوس سے گھونسلے بناتے ہیں جو کسی درخت ‘ پہاڑ یا پھر مکانات کے چھجّوں وغیرہ جیسی جگہوں پر ہوتے ہیں۔ دوسرے پرندوں کے برعکس کبوتر اپنے پوٹے میں ایک مرکب "crop milk" بناتے ہیں جو سیال کی شکل میں ہوتا ہے۔ نر اور مادہ دونوں اس مقوی اور غذائیت سے بھرپور جزو اپنے بچوں کو کھلاتے ہیں۔ عام کبوتر معمولی قیمت میں دستیاب ہوجاتے ہیں جب کہ خاص نسل کے کبوتر جو لمبی اور اونچی اُڑان کی اہلیت رکھتے ہیں ان کی بھاری قیمتیں وصول کی جاتی ہیں اور اسی طرح ان کبوتروں کی دیکھ بھال‘ خوراک اور سدھانے پر خطیر رقوم خرچ ہوتی ہیں۔ کبوتر کی ایک قسم Crowned Pigeon کہلاتی ہے جس کا آبائی علاقہ نیوگنی اور ترکی ہے۔ اس کی جسامت 50 سینٹی میٹر تک ہوتی ہے اور وزن 2-4 کلوگرام تک پایا جاتا ہے۔ باقی تمام نسلیں جو دنیا میں پائی جاتی ہیں وہ عام جسامت کے کبوتر ہیں جن کا وزن 600-800 گرام تک ہوتا ہے۔ کبوتر کے جسم پر پائے جانے والے تمام پروں کا وزن اس کے کُل وزن کا 31-44 فیصد ہوتا ہے۔ کبوتر کے بازوؤں کے عضلات کافی مضبوط ہوتے ہیں جو اسے اونچی پرواز اور دیر تک فضا میں اڑتے رہنے میں مدد کرتے ہیں۔ کبوتر کی ایک اور خصوصیت یہ ہے کہ دوسرے پرندوں کی طرح ان میں Gall Bladder نہیں ہوتا۔ (ارسطو نے بھی اپنی تحقیقات میں یہی لکھا ہے)۔ کبوتروں کا آبائی علاقہ استوائی خطے کے گھنے جنگلات ہیں۔ ان کی بہت ساری اقسام سوانا کے خطے میں بھی پائی جاتی ہے اور یہ مختلف نخلستانوں میں بھی بسیرا کرتے ہیں۔ اس کی بنیادی غذا اجناس ہیں جن میں باجرا‘ جو‘ دھان اور گندم وغیرہ شامل ہیں۔ انسان سے کبوتر کا انتہائی قدیم رشتہ ہے۔ اسے نہ صرف شوقیہ طور پر زمانہ قدیم سے گھر گھر پالا جاتا ہے بلکہ اس کی اڑان کے مقابلے بھی منعقد کئے جاتے رہتے ہیں جن پر بڑی بڑی رقوم کی شرطیں لگائی جاتی ہیں۔ اس کے علاوہ کبوتر زمانہ قدیم کا قاصد کہلاتا ہے۔ سرکاری چٹھیاں (خطوط) بھی اس کے ذریعے بھیجی جایا کرتی تھیں۔ جنگ عظیم میں اس کے شواہد ملتے ہیں کہ کبوتر کے ذریعے خفیہ پیغام رسانی بھی کی جایا کرتی تھی۔ کچھ رومانوی داستانیں ایسی بھی ہیں جن میں کبوتر کا کردار بھی نمایاں نظر آتا ہے کیونکہ یہ دو چاہنے والوں کے درمیان نامہ بر کے فرائض انجام دیا کرتا تھا۔ اردو زبان میں کبوتر کے حوالے سے کئی اصطلاحات‘ محاورات اور کہانیاں منسوب ہیں۔ مثلاً ’’کبوتر کی طرح آنکھیں بند کرلینا‘‘ ’’دل خونِ کبوتر ہونا‘‘ ’’کبوتر ہوجانا‘‘ وغیرہ وغیرہ۔ اردو ادب میں ’’اتفاق میں برکت ہے‘‘ کے موضوع پر جال میں پھنسے ہوئے کبوتروں کے اتحاد کو بڑی خوبصورتی سے پیش کیا گیا ہے جو اردو کلاسیکل کہانیوں میں شمار کی جاتی ہے۔

Shair Collection

اشعار کا مجموعہ

Compilation of top 20 hand-picked Urdu shayari on the most sought-after subjects and poets

انتہائی مطلوب مضامین اور شاعروں پر مشتمل 20 ہاتھ سے منتخب اردو شاعری کی تالیف

SEE FULL COLLECTIONمکمل کلیکشن دیکھیں
Pinterest Share