• نہ جانے کون سی ساعت چمن سے بچھڑے گا
    کہ آنکھ بھر کے نہ پھر سُوئے گلستاں دیکھا
    قائم
  • قائم ہے کیا ہلاہل و آب خضر میں فرق
    آجائے بزم دوست میں جو کچھ سو کیجیے نوش
    قائم
  • سنگ کو آب کریں پل میں ہماری باتیں
    لیکن افسوس یہی ہے کہ کہاں سستے ہو
    قائم
  • تھی خلقت سے اس آب وگل کی بری
    نہ جانے کہ تھی حور یا وہ پری
    قائم
  • سیل آتش میں غرق ہودو جہاں
    جائے گر پھوٹ آبلہ دل کا
    قائم
  • بک بک کے جوں جرس میں زباں آبلہ کی آہ
    سمجھانہ کوئی یاں پہ مرے مدعا کے تئیں
    قائم
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 124

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter