• خلط کی خوبی، ہونٹ توڑ لیا
    جسے چاہا اسے بھنبھوڑ لیا
    انشا
  • پھوٹیں گے اب نہ ہونٹ کی ڈالی پہ کیا گلاب!
    آئے گی اب نہ لوٹ کے آنکھوں میں کیا، وہ نیند!
    امجداسلام امجد
  • کس کے آنسو چھپے ہیں پھولوں میں
    چومتا ہوں تو ہونٹ جلتے ہیں
    بشیر بدر
  • برہاڈسن کے درد تھیں بیا کل پڑے نت زرد ہو
    بے کس ہونٹ جابیل تے جیوں پات پیلا جھڑپڑے
    شاہی
  • کیا علم انھوں نے سیکھ لیے جو بن لکھے کو بانچے ہیں
    اور بات نہیں منھ سے نکلے بن ہونٹ ہلائے جانچے ہیں
    نظیر
  • مرے دل کو رکھتا ہے شادماں، مرے ہونٹ رکھتا ہے گل فشاں
    وہی ایک لفظ جو آپ نے مرے کان میں ہے کہا ہوا
    امجد اسلام امجد
First Previous
1 2 3 4 5 6
Next Last
Page 1 of 6

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter