• اے کمینے دانت ہے سوہا نہیں
    ہے ادھوری ہونٹ تو اس کا نہیں
    حسن علی خاں
  • برہاڈسن کے درد تھیں بیا کل پڑے نت زرد ہو
    بے کس ہونٹ جابیل تے جیوں پات پیلا جھڑپڑے
    شاہی
  • ہوں داغ ناز کی کہ کیا تھا خیال بوس
    گلبرگ سادہ ہونٹ جو تھا نیلگوں ہوا
    میر
  • درد کی رہگزار میں، چلتے تو کس خمار میں
    چشم کہ بے نگاہ تھی، ہونٹ کہ بے خطاب تھے
    امجد اسلام امجد
  • خلط کی خوبی، ہونٹ توڑ لیا
    جسے چاہا اسے بھنبھوڑ لیا
    انشا
  • مرے دل کو رکھتا ہے شادماں، مرے ہونٹ رکھتا ہے گل فشاں
    وہی ایک لفظ جو آپ نے مرے کان میں ہے کہا ہوا
    امجد اسلام امجد
First Previous
1 2 3 4 5 6
Next Last
Page 1 of 6

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter