• ظلم کی طرح نکالی ستم ایجاد کیا
    عین شادی میں دلِ شاد کو ناشاد کیا
    واسوخت امانت
  • ظلم سہہ کر ترے کوچہ سے چلے تھے ہربار
    یاد کیں پچھلی جو باتیں ووہیں فی الفور رہے
    جرات
  • بغیر از ظلم بیدادی نہ تھی اس وقت کچھ شادی
    ہوئی قاسم کی دامادی دیکھو تقدیر باری بھی
    عبد اللہ قطب شاہ
  • تکلّف بر طرف نظارگی میں بھی سہی لیکن
    وہ دیکھا جائے، کب یہ ظلم دیکھا جائے ہے مجھ سے
    غالب
  • ظلم کی ٹہنی کبھی پھلتی نہیں
    ناؤ کاغذ کی سدا چلتی نہیں
    اسماعیل میرٹھی
  • پیار سے ہنس بیٹھنا ہے اور جگت اور جھوٹ ہے
    عدل ہے اور ظلم ہے غارت ہے لوٹا لوٹ ہے
    نظیر
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 16

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter