• یاں زہر دے تو زہر لے، شکر میں شکر دیکھ لے
    نیکوں کو نیکی کا مزہ موذی کو ٹکر دیکھ لے
    نظیر
  • میں رات ٹوٹ کے رویا‘ تو چین سے سویا
    کہ دل کا زہر میری چشمِ تر سے نکلا تھا
    احمد ‌فراز
  • ٹھہرو کہ آئینوں پہ ابھی گرد ہے جمی
    سینوں کا سارا زہر نگاہوں میں آگیا
    وزیر ‌آغا
  • چوٹی تیری سو ناگ ہے ہور زہر اس میں کڑوا
    اوگھر کھیلاں میں دستی توں سا چلی سنپارا
    قلی قطب شاہ
  • لذتِ زہر غم فرصتِ دلداراں سے
    ہووے منہ میں جنھوں کی شہد و شکر مت پوچھو
    میر تقی میر
  • دھوپ ہے اور زرد پھولوں کے شجر ہر راہ پر
    اک ضیائے زہر سب سڑکوں کو پیلا کرگئی
    منیر ‌نیازی
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 15

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter