• اے یار ترے آگے چراغوں کو ہے لرزا
    کیا حسن کا ہے رعب کہ تھراتے ہیں معشوق
    شرف( آغا حجو)
  • ہے‘ اور باقی رہے یاد ان لمحات زریں کی
    ادا دیکھی تھی جب تزئین حسن و حسن تزیں کی
    نقوش مانی
  • مردوں سے پرچ تو مت حسن ہے پری کمبخت
    اب بھی آ تو جانے دے درگزر اری کمبخت
    انشا
  • نہ غشوہ ہے نہ نازش ہے کسی کی آزمائش ہے
    نہ جلوہ حسن کا ہے بے خودی کی آزمائش ہے
    شوق (مولانا انجب علی)
  • وہ بے پناہ ذکی الحسی وہ حلم و غرور
    کبھی کبھی وہ بھرے گھر میں حسن تنہائی
    گل نغمہ
  • رعب حسن کا گلا دابے تھا منہ سے نکلتی کیا آواز
    قصد تو اس سے کچھ کہنے کا میں نے لاکھوں بار کیا
    شوق قدوائی
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 81

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter