• کے بیوفا کوں کیا آشنا کیا ہے
    تو آبرو نیں کس گھاٹ لا اتارا
    دیر
  • ظالم وہ بیوفا ہے عدو جس کے رشک سے
    اتنا کچھ آگیا خلل اپنے نباہ میں
    مومن
  • میں آزما چکا ہوں نہ کھانا کوئی فریب
    اس بیوفا کا قول و قسم دم سے کم نہیں
    شہیدی(کرامت علی)
  • تو ہے کس ناحیہ سے اے دیار عشق کیا جانوں
    ترے باشندگاں ہم کاش سارے بیوفا ہوتے
    میر تقی میر
  • لایا مرے مزار پہ اُس کو یہ جذب عشق
    جس بیوفا کو نام سے بھی میرے ننگ تھا
    میر تقی میر
  • آئے ہیں میر منہ کو بنائے جفا سے آج
    شاید بگڑ گئی ہے کچھ اُس بیوفا سے آج
    میر تقی میر
First Previous
1 2
Next Last
Page 1 of 2

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter