• مٹا سکی نہ انھیں روز و شب کی بارش بھی
    دلوں پہ نقش جو رنگِ حنا کے رکھے تھے
    امجد اسلام امجد
  • ساری رات برسنے والی بارش کا میں آنچل ہوں
    دن میں کانٹوں پر پھیلا کو مجھ کو کھینچا جاتا ہے
    بشیر بدر
  • پشت خم یوں کردیا ہے سیل گریہ نے یہ خم
    جس طرح آسیب سے بارش کے ہو دیوار کج
    جسونت سنگھ پروانہ
  • جیسے بارش سے دھلے صحنِ گلستاں امجد
    آنکھ جب خشک ہوئی اور بھی چہرا چمکا
    امجد اسلام امجد
  • وہ تیروں کی بارش وہ یداللہ کا جانی
    پچوبیس پہر گزرے کہ پایا نہیں پانی
    نجم (مصور حسین)
  • جتنا خورشید تپے اتنی ہی بارش ہو سوا
    ہووے کیونکر تپش عشق نہ رحمت کی دلیل
    ذوق
First Previous
1 2 3 4 5 6
Next Last
Page 1 of 6

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter