• آنسو دیئے پر آنکھ کو رونے کی خو نہ دی
    اے بادشاہِ غم، یہ عنایت عجیب تھی
    امجد اسلام امجد
  • اس نے چھوکر مجھے پتھر سے پھر انسان کیا
    مدتوں بعد مری آنکھوں میں آنسو آئے
    بشیر بدر
  • اک بے وفا کے سامنے، آنسو بہاتے ہم
    اتنا ہماری آنکھ کا پانی مرا نہ تھا
    بشیر بدر
  • رہتا نہیں ہے آنکھ سے آنسو ترے لیے
    دیکھی جو اچھی شے تو یہ لڑکا مچل پڑا
    میر تقی میر
  • میں چک تے نت اٹھ انجو ڈھال
    گل پینی آنسو موتی مال
    عادل شاہ ثانی
  • دل ہے داغ جگر ہے ٹکڑے آنسو سارے خون ہوئے
    لوہو پانی ایک کرے یہ عشق لالہ عذاراں ہے
    میر تقی میر
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 29

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter