• ہمشکل نبی کھا کے جو برچھی کا پھل آئے
    دل لاکھ سنبھالامگر آنسو نکل آئے
    منظور راے پوری
  • آپ کی بات تو کچھ اور ہے ورنہ اے دوست
    کس کو لگتے ہیں کسی آنکھ میں پیارے آنسو
    حکیم ‌ناصر ‌الدین
  • یہ وہ آنسو ہیں جن سے زہرہ آتش ناک ہوجاوے
    اگر پیوے کوئی ان کو تو جل کر خاک ہوجاوے
    یقین
  • تری زلف سیہ کی یاد میں آنسو جھمکتے ہیں
    اندھیری رات ہے برسات ہے جگنو چمکتے ہیں
    میر
  • یہ کہتے ہی تیور علی اکبر نے پھرائے
    ہمراہ دم سرد کے آنسو نکل آئے
    انیس
  • حسن بیاں یہ جتنے جواں تھے اچھل پڑے
    جو جو مسن تھے ان کے تو آنسو نکل پڑے
    مراثی
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 29

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter