• سراپا آرزو ہونے نے بندہ کردیا ہم کو
    وگرنہ ہم خدا تھے گردل بے مدعا ہوتے
    میر
  • بری ہے عیب سے کب آرزو کلام ترا
    تمام در نہیں ہوتے خوش آب پانی میں
    آرزو
  • یہ آرزو تھی تجھے گُل کے روبرو کرتے
    ہم اور بلبلِ بے تاب گفتگو کرتے
    آتش
  • اے فلک پتھر پڑیں تجھ پر غضب تونے کیا
    خاک میں کیسی ملادیکوہکن کی آرزو
    صبا
  • پھر مرے داغ کہن اے داغ تازہ ہوگئے
    دل میں آئی صورت باد بہاری آرزو
    گلزار داغ
  • پر تو نہےن کہ پہنچیے دو پانوں ہیں مگر
    گوڑے رکڑنے کی ہے سدا جن کو آرزو
    سودا
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 21

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter