مژگاں


مژگاں کے معنی

ظفر کا شعر ہے ۔ ہجوم اشک سے مژگاں اگر اونچی نہیں ہوتی۔ تعجب کیا کہ شاخ پر ثمر اونچی نہیں ہوتیمژہ کی جمع۔ مگر اردو میں مفرد بھی استعمال ہوتا ہے

مژگاں کے مترادفات


Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter