اٹک


اٹک کے معنی

اٹکنا مصدر سے صیغۂ امر و حاضر مصدراٹکنا کاپاکستان کے ایک بڑے مشہور دریا کا نام جسے دریائے اباسین یا سندھ بھی کہتے ہیں غالباً اٹک اسی وجہ سے نام رکھا گیا کہ شمالی فاتحین کو اس دریا سے اترنے میں ہمیشہ اٹکاؤ یعنی مشکل پیش آتی رہی یا اس سبب سے کہ قلعہ اٹک کے نیچے سے یہ دریا گزرتا ہے اٹک نام پڑگیا خیمہ وغیرہ کی رسّیروک ٹوکسَدِّ راہسدِ بابسنتری کا روکنانگاہ لڑنا

اٹک کے مترادفات

اٹک کے انگریزی معنی

evil suggestionsobstacleobstruction

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter